اپنی قیمت کا اندازہ لگائیے!



ايک چھوٹا سا لڑكا دوكان ميں داخل ہوكر كونے ميں لگے ٹيليفون كيبن كی طرف بڑھا۔
ٹيليفون ميں سكے ڈالنا تو اُس كيلئے ايک اچھا خاصا مسئلہ تھا ہی، بات كرنے كيلئے تو اُسے باقاعده سٹول پر كھڑا ہی ہونا پڑا۔

دوكاندار كيلئے يہ منظر كافی متعجب کن تھا، اُس سے رہا نہ گيا اور لڑكے كی گفتگو سننے كيلئے اس نے اپنے كان اُدھر لگا ديئے۔

لڑكا کسی عورت سے مخاطب تھا اور اس سے کہہ رہا تھا: "ميڈم، آپ مجھے اپنے باغيچے كی صفائی ستھاائی اور ديكھ بھال كيلئے ملازم ركھ لیجئے”.

جبکہ عورت كا جواب تھاكہ”فی الحال تو اُس كے پاس اس كام كيلئے ايک ملازم ہے”.

لڑكے نے اِصرار كرتے ہوئے اُس عورت سے كہا كہ "ميڈم! ميں آپكا كام آپكے موجوده ملازم سے آدھی اُجرت پر كرنے كيلئے تيار ہوں”۔

اُس عورت نے جواب دیا كہ وه اپنے ملازم سے بالكل راضی ہے اور كسی قيمت پر بھی اُسے تبديل نہيں كرنا چاہتی”۔

اب لڑكا باقاعده التجاء پر ہی اُتر آيا اور عاجزی سے بولا كہ: "ميڈم، ميں باغيچے كے كام كے علاوہ آپکے گھر كے سامنے والے گزرگاہ اور فٹ پاتھ كی بھی صفائی کرونگا اور آپكے باغيچے كو فلوريڈا پام بيچ كا سب سے خوبصورت باغيچہ بنا دونگا”.

اور اِس بار بھی اُس عورت كا جواب نفی ميں تھا۔ لڑكے كے چہرے پر ايک مسكراہٹ آئی اور اُس نے فون بند كر ديا۔

دوكاندار جو يہ ساری گفتگو سن رہا تھا اُس سے رہا نہ گیا اور وہ لڑكے كی طرف بڑھا اور اُس سے كہا: ميں تمہارى اعلٰی ہمتی کی داد ديتاہوں، اور تمہاری لگن، مثبت سوچوں اور اُمنگوں كا احترام كرتا ہوں، ميں چاہتا ہوں كہ تم ميری اس دوكان پر كام كرو”

لڑكے نے دوكاندار كو كہا:”آپ كی پیشکش كا بہت شكريہ ، مگر مجھے كام نہيں چاہيئے، ميں تو صرف اِس بات كی تصديق كرنا چاہ رہا تھا كہ ميں آجكل جو كام كر رہا ہوں كيا اُس كا معيار قابلِ قبول بھی ہے يا نہيں؟

اور ميں اِسی عورت كے پاس ہی ملازم ہوں جِس كے ساتھ ميں ٹيليفون پر گفتگو كر رہا تھا”

اگر آپكو اپنے كام كے معيار پر بھروسہ ہے تو پھر اُٹھائيے ٹيليفون اور پركھيئے اپنے آپكو!

Advertisements

7 Responses to اپنی قیمت کا اندازہ لگائیے!

  1. MUHAMMAD ARHAM نے کہا:

    very awesome story saleem bhai, luv this story..now thinking about myself to check my position …. Allah apko hamesha khush rakhain..ameen

  2. Darvesh Khurasani نے کہا:

    حاجی صاحب ۔اس لڑکے نے تو کمال کردیا ۔

    • محمد سلیم نے کہا:

      جناب خراسانی صاحب، کیا حال ہیں؟ جی، اس لڑکے نے تو ہم جیسے ڈنگ ٹپاؤ یا ٹائم پاس جاب کرنے والوں کیلئے ایک لمحہ فکریہ چھوڑ دیا ہے۔ اللہ ہمیں اور ہماری کوتاہیوں کو معاف کردے۔

      • Darvesh Khurasani نے کہا:

        حاجی صاحب اللہ تعالیٰ کا فضل ہے ٹھیک ہوں، امید ہے آپ بھی خیریت سے ہونگے۔

        جب سے اس لڑکے کا واقعہ پڑھا ہے ، اسی دن سے دل میں یہ بات ہے کہ میں بھی اپنے ادارے کو فون کروں اور اپنے بارے ان سے پوچھ لوں ، لیکن اس بات کا تصور کرتے ہی دل کی دھڑکن تیز ہوجاتی ہے۔ جس کے سبب اپنے اس ارادے کو ترک کردیتا ہوں۔

        اللہ تعالیٰ ہمارے حال پر رحم فرمائے اور ہم سے عافیت کا معاملہ کرے، ورنہ تو۔ ۔ ۔

  3. MEHBOOB نے کہا:

    Really this is a wonderful and surprising story for me and of course has a big and great lesson for us.

    thank you my friend

  4. پنگ بیک: اپنی قیمت کا اندازہ لگائیے! | Muhammad Saleem

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s