نا اُمید مت ہوں


نا اُمید مت ہوں
یہ دنیا فانی ہے
♦♦♦♦♦♦

اور جب میں نے دسویں منزل سے چھلانگ لگائی

میری تو ساری زندگی ہی غموں اور دکھوں سے بھری تھی
کوئی حل بھی تو نظر نہیں آتے تھے
بس خود کشی کا ہی ایک راستہ باقی تھا
چھلانگ لگاؤں یا نہ لگاؤں؟
اور پھر میں نے واقعی چھلانگ لگا دی۔

یہ نویں منزل ہے۔
ارے یہ تو وہ دونوں میاں بیوی ہیں
جن کی آپس کی محبت اور خوشیوں بھری زندگی
کی ہماری بلڈنگ میں مثال دی جاتی تھی۔
(یہ تو آپس میں لڑ رہے ہیں)
اس طرح تو یہ کبھی خوش و خرم نہیں تھے
♦♦♦♦♦♦

یہ آٹھویں منزل ہے۔
یہ تو ہماری بلڈنگ کا مشہور ہنس مکھ نوجوان ہے
جو روتے لوگوں کو ہنسنے پر مجبور کر دیتا تھا۔
یہ تو خود بیٹھا رو رہا ہے۔۔۔
♦♦♦♦♦♦

یہ ساتویں منزل ہے۔
کیا یہ ہماری بلڈنگ کی وہ عورت نہیں
جو اپنی شوخی، چنچل طبیعت اور چستی و چالاکی کی وجہ سے مشہور تھی۔
یہ تو اسکا مختلف رخ دکھائی دے رہا ہے۔
اتنی ساری دوائیں؟
یہ تو دوائیوں کے سہارے زندہ تھی۔
بیچاری اتنی زیادہ بیمار تھی کیا؟
♦♦♦♦♦♦


یہ چھٹی منزل ہے۔
یہ تو ہمارا انجینیئر ہمسایہ لگتا ہے۔
بیچارے نے پانچ سال پہلے انجیئرنگ مکمل کی تھی،
اور تب سے روزانہ اخبار خرید کر ملازمت
کیلئے اشتہارات دیکھتا رہتا ہے۔
♦♦♦♦♦♦


یہ پانچویں منزل ہے۔
یہ ہمارا بوڑھا ہمسایہ ہے۔
بیچارہ انتظار میں ہی رہتا ہے کہ کوئی آ کر اسکا حال ہی پوچھ لے۔
اپنے شادی شدہ بیٹے اور بیٹیوں کا بس انتظار ہی کرتا رہتا ہے۔
لیکن کبھی بھی کسی نے اس کا دروازہ نہیں کھٹکھٹایا۔
بیچارہ کتنا اداس دکھائی دے رہا ہے۔
♦♦♦♦♦♦


یہ چوتھی منزل ہے۔
ارے یہ تو ہماری وہ خوبصورت اور ہنستی مسکراتی ہمسائی ہے!
بیچاری کے خاوند کو مرے ہوئے ہوئے تین سال ہو گئے ہیں۔
سب لوگ تو یہی سمجھ رہے تھے کہ اسکے زخم مندمل ہو چکے۔
مگر یہ تو ابھی بھی اپنے مرحوم خاوند کی تصویر اٹھائے رو رہی ہے۔
♦♦♦♦♦♦

دسویں منزل سے کودنے سے پہلے تو میں نے یہی سمجھا تھا
کہ میں ہی اس دنیا کی سب سے غمگین اور اداس شخص ہوں

یہ تو مجھے اب پتہ چلا ہے کہ یہاں ہر کسی کے اپنے مسائل اور اپنی پریشانیاں ہیں۔
اور جو کچھ میں نے ملاحظہ کیا ہے اس سے تو یہی لگتا ہے
کہ میرے مسائل تو اتنے گمبھیر بھی نہ تھے۔
کودنے کے بعد زمین کی طرف آتے ہوئے، جن لوگوں کو میں دیکھتے
ہوئے آئی تھی وہ اب مجھے دیکھ رہے ہیں۔
◊◊◊◊◊◊

کاش ہر شخص یہی سوچ لے کہ دوسروں پر پڑی ہوئی مصیبتیں اور پریشانیاں
اُن مصیبتوں اور پریشانیوں سے کہیں زیادہ اور بڑی ہیں جن سے وہ گزر رہا ہے

تو وہ کس قدر خوشی سے اپنی زندگی گزارے۔
اور ہمیشہ اپنے رب کا شکر گزار رہے۔
◊◊◊◊◊◊

میرے پیارے دوست: مایوس نہ ہوا کریں، یہ دنیا فانی ہے۔
اس دنیا میں موجود ہر شئے اللہ کے نزدیک مچھر کے ایک پر کے برابر کی حیثیت بھی نہیں رکھتی۔

اور جان لیجیئے کہ اللہ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے۔
♥♥♥♥♥♥

Advertisements

12 Responses to نا اُمید مت ہوں

  1. گمنام نے کہا:

    Bohat Khoob

  2. mohd.hussain shakeel=saudia arabia jeddah نے کہا:

    asalkum sir
    this is very very good blog i like it thanks god give you more strenth and help for righting some more
    m.h.shakeel saudia arabia

  3. Darvesh Khurasani نے کہا:

    آپکے کالموں سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ آپ کے سمجھانے کا طریقہ مختصر مگر پُر اثر ہوتا ہے۔ بہت پیارا طریقہ اپنایا ہے ، بندہ آسانی سے بات کو سمجھ لیتا ہے۔

    • محمد سلیم نے کہا:

      خراسانی صاحب، پسندیدگی کا شکریہ۔ جی آپ نے ٹھیک پہچانا ہے کہ میرا طریقہ آسان الفاظ میں مدعا بیان کرنا ہوتا ہے۔ آپ کو یہ جان کر حیرانی ہوگی کہ مجھے ایک بار یہ پیغام بھی ملا ہے کہ میں نورانی قاعدہ پڑھنے والوں کیلئے لکھتا ہوں۔ میں بہت محظوظ ہوا تھا یہ تبصرہ پڑھ کر۔

      • Darvesh Khurasani نے کہا:

        یہ تو واقعی عجیب تبصرہ کیا ہے ۔ ویسے میں نے ریٹائرڈ پروفیسر کو بھی دیکھا ہے جو کہ مسجد میں نورانی قاعدہ پڑھتا تھا، اپنا تلفظ ٹھیک کرنے کیلئے۔

  4. khalid نے کہا:

    MashAlla nice blog and very imprecive Jazak allah

  5. hijabeshab نے کہا:

    اچھی تحریر ہے ۔۔

  6. ماشااللہ آپ بہت ہی اچھا کام کر رہے ہیں۔ میں آپ کے بلاگ سے بہت متاثر ھوا ھوں۔

    جزاک اللہ۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s