انتظار


خلیل  ایک منفرد شخصیت کا مالک خوبرو نوجوان، جس کی صلاحیتوں پر  کسی کو شک نہیں، مگراپنی اس خامی کہ کسی کام سے جلدی اُکتا جانا، تیس سال کا ہو جانے کے باوجود بھی زندگی کی حقیقی کامیابیوں سے کہیں دور تھا۔ تعلیمی میدان میں ایک کو چھوڑکر دوسرے علم کے پیچھے بھاگتا رہا اور اب ملازمتوں کا بھی یہی حال کہ کہیں ٹک کر کام نہیں کر پا رہا تھا۔  شادی کے نام سے اُس کا بدکنا محض اسی بناء پر تھا کہ وہ ابھی تک کسی ملازمت  کو مستقل اپنانے کیلئے خود کو ذہنی طور پر تیار  ہی نہیں کر پا رہا تھا۔

خلیل کے ماں باپ اپنے بیٹے کی اس چلبلی طبیعت سے خوب واقف  ہر وقت اُس کیلئے پریشان رہتے تھے۔ ایک دن اُس کے باپ نے اُسے صبح صبح فون کیا کہ آج ہم تیرے شہر میں آ رہے ہیں اور وہاں کے مشہور ریستوران میں تین بجے اکھٹے دوپہر کا کھانا  کھائیں گے۔

خلیل اس شہر میں پچھلے چند ماہ سے رہ رہا تھا، اس دوران اُس کی والدین سے ملاقات بھی نہیں ہوئی تھی۔ والدین سے ملنے کی خوشی میں وقت سے پہلے ہی مطلوبہ ریستوران چلا گیا اور باہر کا منظر خوبصورت دکھائی دینے والی ایک میز پر براجمان ہو گیا۔ بیرے کو اُس نے بتا دیا کہ وہ اپنے والدین کا انتظار کر رہا ہے اور اُن کے آنے پر کھانا طلب کرے گا۔

تین بجے خلیل نے اپنے والد کو فون کر کے پوچھا کہ آپ ابھی تک پہنچے نہیں تو اُس نے جواب دیا وہ راستے میں ہیں اور ابھی پہنچا ہی چاہتے ہیں۔

ساڑھے تین بجے ایک بار پھر خلیل نے فون کر کے والد سے تصدیق کی کہ وہ راستے میں ہی ہیں ناں؟

چار بجے خلیل نے ایک بار پھر اپنے والد کو فون کر کے خیریت پوچھی تو اُس نے کہا؛ میں نے کہہ دیا ہے ناں کہ میں اور تیری ماں   ہم دونوں  راستے میں ہیں اور آ ہی رہے ہیں۔

انتظار کی کوفت میں مبتلا خلیل نے پانچ بجے باپ کی بجائے اپنی ماں کو فون کرکے پوچھا تاکہ صحیح صورتحال کی سمجھ آئے مگر اُس  کی ماں نے بھی وہی جواب دیا جو اُس کے باپ نے دیا تھا کہ ہم راستے میں ہیں اور  بس پہنچا ہی چاہتے ہیں۔

انتظار کی کوفت اور اذیت میں مبتلا خلیل کی حالت دیدنی تھی۔ ناں وہ ریستوران چھوڑ کر کہیں جا سکتا تھا اور ناں ہی فون پر چیخ چلا کر اپنی کوفت کا اظہار کر سکتا تھا، کیونکہ یہ کوئی اور نہیں اُس کے ماں باپ تھے۔ اپنی طبیعت کے برعکس زہر کا  کڑوا گھونٹ بھرے وہیں مرتا کیا کرتا کے مصداق بیٹھا  انتظار کرتا رہا۔

اسی طرح   چھ بجے تو اُس کے ماں باپ  ریستوران میں داخل ہوتے دکھائی دیئے۔ خلیل نے اپنی ناگواری کو دبائے سرد مزاجی سے کھڑے ہو کر ماں باپ سے سلام دُعا لی اور چھوٹتے ہی پوچھا؛ کیا ہوگیا تھا آپ لوگوں کے ساتھ؟ کیوں اتنی دیر لگا دی؟

اُس کے باپ نے نہایت دھیمے سے لہجے میں کہا تیری  وجہ سےہمیں  یہ ساری دیر ہوئی ہے۔

میری وجہ سے؟ خلیل نے اپنی حیرت کو دباتے ہوئے باپ سے پوچھا۔

باپ نے پھر سے  دھیمے لہجے میں خلیل کو اپنا وہی  جواب دیا ہاں تیری وجہ سے دیر ہوئی ہے یہ ساری۔

اس بار خلیل کی ماں نے دخل اندازی کرتے ہوئے کہا؛ چلو بیٹا  کیا ہو گیا  اب، آخر ہم پہنچ ہی گئے ہیں ناں۔ ہو سکتا ہے تم نے کوئی اچھا سبق ہی سیکھا ہو آج کی اس ملاقات سے۔

خلیل نے پوچھا امی جی، اس کوفت سے جو میں نے اُٹھائی ہے بھلا کونسا اچھا سبق نکلتا ہے مجھے بھی تو بتا ئیے؟

خلیل کے والد نے کہا؛ بیٹے تم چاہتے ہوئے بھی آج ریستوران کو چھوڑ کر نا جا سکے کیونکہ تم جن لوگوں کے انتظار میں یہاں بیٹھے رہے وہ کوئی اور نہیں تمہارے والدین تھے۔، تم بار بار اپنی جھنجھلاہٹ کو دبا کر ہمیں فون کرتے رہے، چاہنے کے باوجود بھی اپنی آواز کو اونچا نا کر سکے کہ سامنے کوئی اور نہیں تمہارے والدین تھے۔ اگر تمہارا آج کا مقصد یہاں بیٹھ کر  اپنے پیارے والدین سے ملاقات کرنا تھی اور اُن کے ساتھ بیٹھ کر کھانا کھانے کی سعادت حاصل کرنا تھی تو تمہیں انتظار کی کوفت تو اُٹھانا پڑی مگر تم اپنے مقصد میں کامیاب رہے ہو۔

 خلیل جو ابھی تک اپنے غصے اُکتاہٹ اور جھنجھلاہٹ کو  دبائے ہوئے تھا اس بات کا مطلب نا سمجھ سکا اور پوچھ ہی لیا کہ ابا جی مجھے آپ کی بات کچھ سمجھ نہیں آئی۔

 خلیل کے والد پھر گویا ہوئے؛  بیٹے تمہارے اندر زندگی کے ہر شعبہ میں کامیاب ہونے کی پوری صلاحیتیں ہیں، مگر  ہر کوشش کے نتائج بر آنے تک صبر کے ساتھ ایک انتظار کی ضرورت ہوتی ہے جو تمہارے اندر نہیں ہے۔ صبر ایک  تکلیف دہ مرحلہ ضرور ہوتا ہے مگر اس کے نتائج میٹھے پھلوں کی طرح ہوتے ہیں۔  اپنے خوابوں کی تعبیر کیلئے اس طرح صبر کے ساتھ انتظار کرو جس طرح تم نے آج اپنے والدین کے خیریت سے پہنچ جانے کا کیا ہے۔ آج  تم چاہتے ہوئے بھی اپنے منہ سے اُف نا کر سکے کہ معاملہ والدین کا تھا جن کو نا چھوڑا جا سکتا تھا اور نا کچھ بولا جا سکتا تھا۔ آج اگر تُم نے انتظار کیا ہے تو  اپنی مراد بھی تو پائی ہے۔

آج پہلی بار تھا کہ خلیل سر جھکائے اپنے والدین کی باتیں اس توجہ سے سُن رہا تھا۔ اندر سے اُسکا  دل  اپنی اُن تمام ناکام کوششوں کیلئے دھاڑیں مار کر رو رہا تھا جن کے نتائج کا انتظار کیئے بغیر اپنی لااُبالی طبیعت کے ہاتھوں مجبور وہ ایک کو چھوڑ دوسری کے تعاقب میں بھاگتے بھاگتے تھک چکا تھا۔ کاش یہ سب کچھ وہ بہت پہلے سیکھ پاتا  کہ خواب حقیقت بنتے دیکھنے کیلئے صبر کرنا سیکھنا پڑتا ہے۔

Don’t-give-up-

مشہور سائنسدان تھامس ایڈیسن کہتا ہے زندگانی میں ناکام  ہونے والے اکثر لوگ وہ ہیں جنہوں نے اپنی کوششیں اس وقت ترک کیں جب انہیں ادراک ہی نہیں تھا کہ وہ کامیابی کے کس قدر نزدیک جا پہنچے ہیں۔

Many of life’s failures are people who did not realize how close they were to success when they gave up.”    Thomas A. Edison

Advertisements

About محمد سلیم

میرا نام محمد سلیم ہے، پاکسان کے شہر ملتان سے ہوں، تلاشِ معاش نے مجھے آجکل چین کے صوبہ گوانگ ڈانگ کے شہر شانتو میں پہنچایا ہوا ہے۔ مختلف زبانوں (عربی خصوصیت کے ساتھ) کے ایسے مضامین ضن میں اصلاح اور رہنمائی کے دروس پوشیدہ ہوں کو اردو میں ترجمہ یا تھوڑی سی ردو بدل کر کے ایمیل کرنا میرا شوق رہا ہے۔ میں اپنی گزشتہ تحاریر کو اس بلاگ پر ایک جگہ جمع کرنا چاہ رہا ہوں۔ میں مشکور ہوں کہ آپ یہاں تشریف لائے۔
This entry was posted in Uncategorized, اصلاحی and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

28 Responses to انتظار

  1. حسن نے کہا:

    جناب!
    عمدہ ۔ کسی نے کہا تھا کہ انتظار دنیا کا سب سے مشکل کام ہوتا ہے۔
    خیر اگلی پوسٹ کا انتظار رہے گا۔

  2. محبوب بھوپال نے کہا:

    آسلام و علیکم
    بہت اچھی تحریر۔۔۔۔۔
    لکھتے رہیے بہتوں کا بھلا ھو گا

  3. عدنان شاہد نے کہا:

    سلیم بھائی بہت سبق آموز تحریر ہے۔ ان شاء اللہ اس سے ہمیں بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔

  4. عطاء رفیع نے کہا:

    مین گوگل کرنٹس پر بلاگز کا مطالعہ کرتا ہون.
    apne shayd read more ka option istemal kia h, islie apke articles wahan puray ni aate or phr blog pr ana parhta he.
    wese sahl pasndi se kam lekr nikal jata hu lekin apki tahrir yahan tak le I. jzakallah is piari post k lie.

    phone se urdu likhna diqqat talab h.

    • محمد سلیم نے کہا:

      جناب عطا رفیع صاحب المحترم، بلاگ پر خوش آمدید، اھلا و سھلا یا مرحبا
      مجھے خوشی ہوئی کہ آپ میرے بلاگ کے لنک کا پیچھا کرتے ہوئے یہاں‌تک پہنچے۔ گوگل کی اپنی پالیسی ہوگی جس کے تحت وہ آرٹیکل کا پری ویو چھاپتے ہونگے ورنہ میں‌نے تو ایسی کوئی سیٹنگ نہیں‌کی ہوئی۔ تشریف لاتے رہا کریں، آپ سے علم حاصل ہوگا۔

  5. نورمحمد نے کہا:

    سلامی قبول کیجئے سلیم بھائی ۔ ۔ ۔

  6. samina wajeeh نے کہا:

    Very nice sharing! Indeed have a brutal view of life present here, on the basis of our short vision and impatient behavior we prefer to quit rather than wait and watch, another new face of life….

  7. ماشااللہ بہت بڑھیا سبق آموز تحریر ہے جانب محترم محترم محمد سیلم صاحب
    اللہ آپ کو جزائے خیر عطا فرمائے

  8. فیصل مشتاق نے کہا:

    ایک بہت پرانا سنا ہوا شعر ذہن میں آیا۔ لگتے ہاتھ وہ بھی حاضرِ خدمت کر دوں۔ (کمی بیشی پیشگی معافی کے ساتھ)

    اک سحر کی آس میں جو تم آخر وقت تک جاگے ہو
    سو نہ جانا جاگنے والو، اس کے بعد اُجالے ہیں

  9. فیصل مشتاق نے کہا:

    السلام علیکم ورحمتہ
    بہت خوب تحریر۔ ۔ ۔
    خلیل صاحب اور مسٹر تھامس دونوں نے اچھا سبق دیا۔ لگے رہو، لگے رہو، لگے رہو۔ ۔ ۔ ۔

  10. منصورالحق منصور نے کہا:

    بہت خوب جناب

  11. عمیر ملک نے کہا:

    آئی ایم آلسو سوچنگ ناؤ۔۔۔۔۔!

  12. مانی نے کہا:

    لاجواب۔ ہمیں اسی پوسٹ سے سبق مل گیا۔

    انشاء اللہ، ابا اماں کو ہمیں ہوٹل میں بٹھانے کی ضرورت پیش نہیں آئے گی۔ 🙂

  13. بہت عمدہ جناب۔۔۔ ہمیشہ کی طرح نہایت عمدہ اور سبق آموز۔
    اس تحریر سے حضرت عمر بن عبدالعزیز

  14. سعید نے کہا:

    خیلے خوب

  15. تحریر بہت زبردست ہے۔۔

    اب تو میں بھی بڑا ہو کر بڑا ادمی بنو گا۔۔
    تھامسن ایڈیسن سے کسی نے طنزاً کہا کہ اپ 40 بار اپنے مشن (یعنی بلب کی تیاری) میں ناکام ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تھامسن نے معلوم ہے کیا کہا؟؟

    کہنے لگے کہ میں 40 بار ناکام نہیں ہوا، بلکہ میں 40 ایسے طریقے جان گیا ہوں جس سے بلب نہیں بن سکتا۔۔

    • محمد سلیم نے کہا:

      جناب سید آصف جلال صاحب، خوش آمدید، میرے بلاگ پر تشریف آوری اور اس مضمون کی پسندیدگی کا شکریہ۔ علم مؤمن کی گمشدہ میراث ہوتی ہے جہاں سے ملے پا لے۔ آپ نے تھامس ایڈیسن کی ایک اور حکیمانہ بات سے آگاہ کیا اس کیلئے شکریہ قبول کریں۔ راہنمائی کیلئے تشریف لاتے رہا کریں۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s