The House-Maid Jumana


کیا آپ انڈونیشی خادمہ جُمانہ کو جانتے ہیں؟

مندرجہ ذیل قصہ ایک عرب خاتون کے ذاتی مشاہدے اور محسوسات پر مبنی ہے، اُسی کی زبانی سنیئے:

جُمانہ میری ایک سہیلی کے گھر کام کرنے والی انڈونیشی خادمہ کا نام ہے جو ایک گھر یلو ملازم ڈرائیور کی بیوی ہے۔ میں ہمیشہ اُسے اپنی سہیلی کے گھر میں کام کرتے دیکھتی تھی۔ جب بھی جاتی تو بچوں سے بھرپور گھر میں کام کرتے ہوئے اُس کے چہرے پر تھکن کے آثار ہی پاتی۔ آخر ایسا کیوں کر نہ ہوتا، بیچاری کی عمر بھی تو پچپن سال ہو چلی تھی اور اوپر سے شوگر جیسے مرض میں بھی مُبتلا تھی۔


ایک دِن میں نے اپنی سہیلی سے پوچھ ہی ڈالا کہ ابھی اسکی عمر آرام کرنے کی ہےکیا؟ میری سہیلی نے جواب دیا؛ ہاں کہتی تو ٹھیک ہو مگر بیچاری کے بچے ابھی سکول اور یونیورسٹی میں پڑھ رہے ہیں اور یہ خود ہی مزید کام کرنا چاہتی ہے، اللہ اَس کے حال پر رحم فرمائے۔

آخری بار جب میں  اپنی سہیلی کے گھر گئی تو جُمانہ کی جگہ پر کسی اور نوکرانی کو  کام کرتے پایا، میں نے حیرت سے پوچھا جُمانہ کدھر ہے؟ میری سہیلی نے مسکراتے ہوئے ہوئے کہا، جُمانہ واپس اپنے مُلک چلی گئی ہے بیچاری نے بڑی کٹھن زندگی گُزاری تھی مگر اب اُس نے اپنے سارے مقاصد اور ساری دلی خواہشات پوری کر لی ہیں لہٰذا اب وہ آرام کرنا چاہتی ہے۔

یہ سب کُچھ بتاتے ہوئے میری سہیلی کی آنکھوں میں ایک عجیب سی چمک اُتر آئی تھی اور چہرے پر آئی گہری مسکراہٹ کو نظر انداز کرنا میرے لئیے ناممکن تھا۔ میں نے اپنی سہیلی سے پوچھا، کیا بات ہے؟ کُچھ چھپا تو نہیں رہی ہو؟ اُس نے کہا نہیں تو! جُمانہ نے اپنی زندگی کے سارے مقاصد حاصل کر لئیے تو اُسے مزید کام کرنے کی ضرورت نہیں رہی تھی، اس لیئے وہ کام سے جواب دیکر واپس چلی گئی ہے اور اطمینان سے اپنے گھر رہ رہی ہے۔ میرا سہیلی کا یہ جواب بھی لگ بھگ پہلے جواب جیسا تھا، بات واضح نہیں ہو رہی تھی، میں نے دوبارہ پوچھا؛ کیا مقاصد تھے جُمانہ کے؟ بچوں کی تعلیم؟ کر لی ہو گی نا یونیورسٹی سے گریجوایشن اُس کے بچوں نے؟

میری سہیلی اُٹھ کر گئی اور الماری کی دراز میں سے ایک مسجد کی تصویر اُٹھا لائی۔ ایک چھوٹی سی مگر انتہائی خوبصورت مسجد، اور تصویر میں مسجد کے داخلی دروازے کے پاس سفید سنگ مرمر کی ایک تختی پر کالے رنگ سے لکھا ہوا تھا ‘مسجد جُمانہ’۔

میں نے پوچھا؛ یہ کیا ہے؟ میری سہیلی نے کہا؛ یہ ہے جُمانہ کی زندگی کا مقصد جو اُس نے اِس مسجد کو تعمیر کر کے اب حاصل کر لیا ہے۔ اتنی کٹھن اور پُرمشقت زندگی گزار کر، اپنے خون اور پسینے کی کمائی کو اکٹھا کر کے وہ ایک مسجد بنانا چاہتی تھی تاکہ یہ مسجد اُسکی زندگی میں برکت اور اُسکی موت کے بعد ایک صدقہ جاریہ کے طور پر قائم رہے۔

یہ سب کُچھ سُننے کے بعد  یکا یک مُجھے اپنی ساری دُنیا داری نظر آ گئی اور میں اپنی نظروں میں گرتی ہی چلی گئی۔ میرے سامنے ایک پُروقار اور عظیم عورت کا نقشہ آ گیا جس کے سامنے میری حیثیت ایک پستہ قد بونی کی سی تھی اور یہ شخصیت کسی اور کی نہیں ایک نوکرانی کی تھی جسکا نام تھا جُمانہ، انڈونیشی خادمہ جُمانہ۔
اِس خادمہ نے اپنی زندگی کا ایک مقصد مقرر کیا تھا، اپنی آخرت کیلئے ایک عظیم و نبیل مقصد۔ جو محض خواب نہیں تھا جس کی صرف تمنا کی جا سکے۔ یہ ایک مشکل مقصد ضرور تھا مگر اُس نے اسکے حصول کیلئے جانفشانی، مستقل مزاجی، لگن اور ہمت و جذبے کے ساتھ کام کیا تھا۔

اس خبر نے تو مُجھے ہلا کر رکھ دیا تھا۔ میں سوچ میں پڑ گئی تھی کہ اگر یہ ایک ان پڑھ اور عجمی عورت کا مقصدِ حیات ہو سکتا ہے تو! ہم عربوں کی زندگی کے کیا مقاصد ہیں جو قرآن پڑھنے کی مہارت میں اپنا ثانی نہیں رکھتے۔ جو اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ علم و ادب کی ابتداء اور منبع ہی ہم ہیں۔ اللہ تبارک و تعالیٰ نے دُنیا جہان کی نعمتوں کی فراوانی اور رحمت کی بارش جس طرح ہم پر برسائی ہے شاید ہی اسکی مثال کہیں اور  ملے۔ تو پھر آخر ہم نے اپنی زندگی کے مقاصدکیا  بنا رکھے ہیں؟ یہی ناں کہ

میرا گھر میرے بھائی کے گھر سے بڑا بن جائے؟
ہماری کار بھائی کی کار سے زیادہ قیمتی ہونی چاہیئے؟
ہماری تجارت دن بدن پھیلتی جائے؟
میں اپنے بچوں کو ڈاکٹری یا انجیئرنگ کی تعلیم دلا دوں تاکہ ڈاکٹر یا انجینئر کی ماں کہلا سکوں؟
اور کُچھ نہیں تو گھر میں بیٹھ کر اپنی سہیلیوں، ہمسائیوں، دور و قریب کے رشتہ داروں کی خانہ خرابیوں کے پلان بنانا، اور یہ ثابت کر کے رہنا کہ وہ لوگ ایک ناکام زندگی گزار رہے ہیں اور میں اُن سب سے زیادہ کامیاب اور خوش و خرم رہ رہی ہوں؟
فی الحال تو میرا مقصد اپنی ایک عزیزہ کی شادی میں شرکت کے موقع پر سب سے اچھا اور منفرد لباس زیب تن کرنا اور سب سے قیمتی جواہرات کا سیٹ پہننا ہے۔ اس سے کم پر سمجھوتا تو ہرگز ہو ہی نہیں سکتا تاکہ سارے حاضرین ایک بار تو یہ ضرور کہہ اُٹھیں کہ میں سب سے منفرد لگ رہی تھی! وغیرہ وغیرہ۔

مقاصد پر غور و فکر  کرنے کیلئے کون فارغ ہے؟ نوکرانی رکھو، بیٹھ کر چیونگم چباؤ، ٹیلیفون پر گپیں ہانکو، نیٹ گردی کرو، اور ہو سکے تو وقتاً فوقتاً جمانہ جیسی نوکرانیوں پر پورے دبدبے اور رعب کے ساتھ اپنی دھونس جماؤ، اُن کی توہین اور بے عزتی کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نا پائے، ایسے ہی تو تسکین ہو سکے گی مجھ جیسے فارغ اور نفسیاتی مریض ذہن کی۔

مانا کہ ہمارے متعفن اور بدبو دار، جراثیموں کی کثافت سے لتھڑے ہوئے دماغ اس سے زیادہ سوچ تو نہیں سکتے، مگر یقین کیجئے جمانہ کے قصے نے میرے دماغ پر پڑے ہوئے پردے کو ہٹایا ہے، میں اس قصے کو کسی اور سمت سے دیکھ رہی ہوں۔ میرے ذہن میں ایک میزان سا قائم ہو گیا ہے جس پر بہتر اور کمتر کا موازنہ کیا جا سکتا ہے۔  تاکہ پتہ تو چلے کون کس سے زیادہ بہتر ہے؟ یا پھر دوسرے لفظوں میں یوں بھی کہا جا سکتا ہے کہ: کون گھاٹے میں ہے اور کون فائدے میں ہے؟

دنیا داری کا موازنہ محسوس کیا جا سکتا ہے، دیکھا جا سکتا ہے، پرکھا جا سکتا ہے۔ مگر آخرت کیلئے کیئے گئے کاموں کا موازنہ تو ایمانی ہوتا ہے، گویا ایک غیبی یا نا نظر آنے والا فائدہ۔ تو پھر کون بتائے گا کہ گھاٹے میں کون رہا اور فائدے میں کون رہا؟

آئیے چند ایک مثالیں دیکھتے ہیں شاید بات سمجھ میں آ جائے اور  گھاٹے اور فائدے میں رہنے والوں کا فیصلہ کرنے میں آسانی رہے۔

  • سمیہ اُم عمار کو ابو جہل اذیتیں دے دے کر مار ڈالتا ہے۔ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرما رہے ہیں؛ آل یاسر صبر کرو، تمہارا ٹھکانہ جنت میں ہے۔
  • صہیب بن سنان نے اپنی ساری زندگی کی جمع پونجی اُٹھا کر قریش کو دیدی تاکہ وہ اُسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے ہجرت کر کے جانے دیں۔ سرکار صلی اللہ علیہ وسلم ملتے ہیں تو فرماتے ہیں: ابو یحیٰ منافع کا سودا کر کے آئے ہو۔
  • ابن ملحان کو پیچھے سے کمر میں تیر  آ کر لگتا ہے جو سامنے سے سینے کو پھاڑتا ہوا باہر  نکل جاتا ہے اور وہ ہیں کہ خوشی سے چلا چلا کر کہہ رہے ہیں؛ رب کعبہ کی قسم، میں جیت گیا۔
  • مشہور جلیل صحابی ذوالبجادین (عبداللہ المزنی) سے اُسکے چچا نے سارا مال متاب چھین کر بھگا دیا۔ اور جب انہوں نے وفات پائی تو سرکارِ دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم بذاتِ خود اُس کی قبر میں اُترے اور دُعا فرمائی؛ اے اللہ میں اس سے راضی ہوں تو بھی اس سے راضی ہو جا۔ ابنِ مسعود کہتے ہیں اے کاش اُس قبر میں ذوالبجادین کی جگہ میں پڑا ہوتا۔

ہو سکتا ہے اھلِ دُنیا کی نظروں میں یہ سب لوگ گھاٹے میں رہے ہوں! لیکن آخرت کی ترازو پر انہوں نے بہشتِ بریں کو جیتا ہے۔

  • مزید، اگر ہم فرعون کی بیٹی ماشطہ کا قصہ ذہن میں لائیں تو صورتحال کُچھ یوں بنتی ہے کہ ماشطہ  اللہ سُبحانہ و تعالیٰ کی وحدانیت کا اقرار کرتے ہوئے ایمان لا کر اپنے باپ فرعون کے قہر اور غضب کو دعوت دے بیٹھتی ہے۔ فرعون اپنے عقیدے سے انحراف کو کیسے تسلیم کر سکتا ہے چاہے یہ بغاوت اُس کی بیٹی نے ہی کیوں نہ کی ہو۔ اور سزا کے طور پر ماشطہ کو اُسکے بیٹوں سمیت اُبلتے ہوئے تیل میں ڈال کر مار دیا گیا۔ اھل دُنیا کی نظر میں ماشطہ نے بازی ہاری تھی مگر آخرت کے میزان تو کُچھ اور ہی کہہ رہے ہیں، سنیئے:حدیث شریف میں آتا ہے کہ (یہ صرف حدیث شریف کا مفہوم ہے) ‘سرکارِ دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کا معراج کی رات ایسے مقام سے گزر ہوا جہاں خوشبو بہت نرالی تھی۔ سرکار صلی اللہ علیہ وسلم نے جبرائیل علیہ السلام سے پوچھا یہ کیسی خوشبو ہے؟ اُس نے جواب دیا؛ یہ ماشطہ اور اُسکے بچوں کی خوشبو ہے’۔ گویا ماشطہ کی خوشبو سے آسمان معطر اور فرعون جہنم کی بد بوؤں میں پڑے سڑ رہے ہیں۔

دُنیا میں حاصل کئیے ہوئے فوائد آخرت میں گھاٹے کا سبب بھی بنتے ہیں۔، جس طرح کہ حرام کی ہر کمائی اور اُس کمائی کے فوائد آخرت کیلئے خسارہ ہیں۔ یہاں پر  میں بادشاہ، اُسکے جادوگر اور ایک لڑکے (اصحاب الاخدود) کے مشہور قصے کا حوالہ دینا چاہونگی؛ آپ لوگ جانتے ہیں کہ کس طرح خود لڑکے کے کہنے پر بادشاہ نے ‘بسم رب الغلام’ کہہ کر تیر چلایا تو لڑکے کی جان چلی گئی ورنہ تو اُسے مارنا ممکن ہی نہ رہا تھا۔ لڑکا کیا مرا لوگوں نے بآواز بلند اقرار کر دیا کہ ہم بھی لڑکے کے رب پر ایمان لے آئے ہیں۔ بظاہر لڑکے کے مر جانے سے بادشاہ جیت گیا، مگر اُسکی یہ جیت آخرت کے بڑے خسارے سے پہلے ہی گھاٹا اور خسارہ بن گئی، بادشاہ کو اپنی حکومت، اپنی رعایا اور اپنے مال و متاب کا بھی گھاٹا اُٹھانا پڑا۔ گویا حقیقت میں یہ لڑکے کی جیت تھی۔

آئیے دوبارہ جُمانہ کے قصے کی طر ف لوٹتے ہیں؛ اس فانی دنیا میں جمانہ نے گھاٹے ہی گھاٹے اُٹھائے۔ اپنی صحت کا خسارہ اور گھاٹا اُٹھا کر اپنی جمع پونجی خرچ کر کے ایک مسجد بنا ڈالی، جس سے اس دُنیا میں تو نہ کوئی مفاد حاصل ہوگا اور نہ ہی اُسے اِس سے کوئی روزی روٹی ملے گی۔ مگر آخرت کے میزان میں جمانہ نے بڑے منافع کا بندوبست کیا ہے، اُس نے مسجد بنا کر اپنے لئے ایک صدقہ جاریہ کا اہتمام کر ڈالا ہے، ایک نہ ختم ہونے والے فائدے کا سلسلہ۔ مسجد قائم رہی تو انشاءاللہ اللہ کا ذکر ہوتا رہے گا اور اگر اللہ کا ذکر اور نام بُلند ہوتا رہا تو فائدہ در فائدہ ملتا رہے گا۔

گھاٹے میں تو وہ لوگ رہیں گے جو جمانہ اور جمانہ جیسی دیگر خادماؤں کو حقارت و اہانت کا نشانہ بنائے رکھتے ہیں، ظلم و تشدد کی کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے، اُنکے راحت و آرام کو غارت کرنے کی کوئی کسر نہیں اُٹھا رکھتے، بلکہ بس چلے تو اُنکے حقوق دبا لینے سے بھی نہیں چوکتے۔ ایسے لوگ سراسر گھاٹے میں ہیں چاہے معاملہ کسی نوکرانی کے حقوق غصب کرنے کا ہو یا ہاتھوں میں آئے لاکھوں کروڑوں روپوں کو خُرد و بُرد کرنے کا۔ یہ سب کُچھ اُن کو ذرہ برابر بھی فائدہ نہیں دے گا چاہے یہ خاسر کوئی بھی ہو۔ موسیٰ علیہ السلام کے فرعون کو اُسکی سوجھ کے مطابق قائم خدائی یہاں پانی میں غرق ہونے سے نہ بچا سکی اور نہ وہاں آخرت میں جہنم برد ہونے سے، بلکہ رہتی دُنیا تک بنی نوع آدم کیلئے بنا عبرت کا نشان یہ فرعون آج بھی موجود ہے۔ قارون کے خزانوں کا حساب تو نہیں ہے مگر خزانوں کی چابیوں کو اُٹھانے کیلئے جو لاؤ و لشکر چاہیئے ہوتا تھا اس سب کُچھ کو ، اُسکے خزانے اور اُسکی بنائی ہوئی جنت بے نظیر سمیت زمین میں دھنسا کر عبرت کا نشان بنایا گیا۔

یاد رکھیئے روزِ قیامت مال و متاب اور آل و نسب کسی کام نہیں آئیں گے (جس دن نہ مال ہی کچھ فائدہ دے سکا گا اور نہ بیٹے ۔ ہاں جو شخص خدا کے پاس پاک دل لے کر آیا (وہ بچ جائے گا)) ۔ اور یہ پاک دِل یقیناً وہ دِل ہوتا ہے جو خلوصِ نیت کے ساتھ اپنے لئے ایک منزل اور ایک مقصد مقرر کرے، یہ منزل اور مقصد اللہ کی خاطر ہو اور مفاد آخرت کیلئے۔


جو شخص آخرت کی کھیتی کا خواستگار ہو اس کو ہم اس میں سے دیں گے۔ اور جو دنیا کی کھیتی کا خواستگار ہو اس کو ہم اس میں سے دے دیں گے۔ اور اس کا آخرت میں کچھ حصہ نہ ہوگا (٢الشوری ۔ آیت 20٠)

تو پھر کس کھیتی کو پسند کیا جائے؟ دُنیا کی یا آخرت کی؟ صحابہ کرام نہایت ہی حیرت سے ساتھ ایک دوسرے سے کہا کرتے تھے؛ ہمیں پتہ نہیں تھا کہ اس آیت کے نازل ہونے کے بعد بھی ایسے لوگ موجود رہیں گے جو دُنیا کی کھیتی کی خواہش کریں گے۔

دیکھ لیجیئے؛ ابھی بھی وقت ہے کہ ہم اپنا راستہ اور اپنا مقصدِ حیات مقرر کر لیں۔ سیدھا راستہ اور صحیح مقصد تو یہی ہے کہ اللہ کی طرف لوٹا جائے۔ ہمارا ہر کام اُس کی رضا کا حصول ہو تاکہ ہمیں آخرت میں فلاح اور کامیابی نصیب ہو۔ اگر مقصد اللہ کے سوا کُچھ اور ہوا تو ہماری نمازیں، روزے، صدقہ اور خیرات صرف سراب اور دھوکہ سے زیادہ کُچھ نہیں ہونگے۔

اللہ ہم سب کو دُنیا اور آخرت میں کامیابی اور بھلائی عطا فرمائے- آمین یا رب!

Advertisements

About محمد سلیم

میرا نام محمد سلیم ہے، پاکسان کے شہر ملتان سے ہوں، تلاشِ معاش نے مجھے آجکل چین کے صوبہ گوانگ ڈانگ کے شہر شانتو میں پہنچایا ہوا ہے۔ مختلف زبانوں (عربی خصوصیت کے ساتھ) کے ایسے مضامین ضن میں اصلاح اور رہنمائی کے دروس پوشیدہ ہوں کو اردو میں ترجمہ یا تھوڑی سی ردو بدل کر کے ایمیل کرنا میرا شوق رہا ہے۔ میں اپنی گزشتہ تحاریر کو اس بلاگ پر ایک جگہ جمع کرنا چاہ رہا ہوں۔ میں مشکور ہوں کہ آپ یہاں تشریف لائے۔
This entry was posted in اصلاحی. Bookmark the permalink.

20 Responses to The House-Maid Jumana

  1. باسط نے کہا:

    سلام سلیم صاحب

    مجھے اصلاحی زمرجات بھت پسندھے، آپ کی اس طرح کی کتاب مارکیٹ میں موجود ھےجس میں اصلاح کے قصے موجود ہو؟ اگر ھے تو پلیز اس کتاب کا نام بتا دیئں تاکہ میں لے سکو۔

    وسلام

  2. باسط نے کہا:

    جناب، آپ کا مضمون پڑا، بڑی خوشی ہوئی کہ ایسے لوگ بی ھے اس دینیا میں اور حقیقت میں دینیا کا نظام ان ہئ لوگوں کی وجہ سے چل رھا ہے، ورنہ ہم تو 2 جمع 2 کے چکر میں لگے ہوئے ہیں۔
    Allah ہمیں بی ایسی دین کی خدمت کرنے کی توفیق عطا کریں۔

  3. muhammad asif نے کہا:

    SUBHAN ALLAH

  4. سید عبداللہ السلفی نے کہا:

    السلام و علیکم و رحمتہ اللہ و براکتہ،
    برادر محمد سلیم،
    جزاکم اللہ خیراً انوار الاحسن الخیر۔ اٌمین
    آمین یاالہ العالمین یا الواحد المواحدین۔

    لگے رھو اللہ کے کام میں، اللہ تمھارے کام میں لگا ھوا ھے۔ (مفہوم حدیث رسول اللہ ص)

    بہت ھی باعث خوشی ھے کہ ھمارا مسلمان بھائ محمد سلیم صرف اللہ کے لیے اتنی محنت کر رھا ھے۔
    اللہ قبول فرمائے۔ آمین

    دعاگو،
    سید عبداللہ السلفی

    • محمد سلیم نے کہا:

      برادر محترم جناب سید عبداللہ السلفی صاحب، و علیکم السلام و رحمۃ اللہ و برکاتہ۔ سب سے پہلے تو میرے بلاگ پر تشریف لانے کیلئے شکریہ۔ آپ نے میری کاوش کو پسند فرمایا یہ آپ کا حسنِ ظن اور حسِ نظر ہے۔ جزاکم اللہ خیراً و ایاکم باحسن الجزاء۔ اللہ آپکو صحت و تندرستی اور ایمان کی دولت سے نوازے رکھے۔ آمین
      آپ کیلئے بہت سی نیک خواہشات کے ساتھ ۔ محمد سلیم

  5. بدر یوسف نے کہا:

    آمین

  6. pakaroosa نے کہا:

    I heard that no one is black in china ? is it true ? 🙂 .

  7. اللہ سبحان تعالیٰ ہمارے گناہ معاف فرمائے۔ اور ہمیں نیکی کرنے کی توفیق عطا کرے۔

    کوئی شک نہیں کہ جمانہ نصیبوں والی ہیں اور ایسی سعادتیں نصیبوں والوں کے حصے میں آتی ہیں۔ اللہ ہمارے دل بھی کشا کرے دے۔ اور دین و دنیا میں کسی کے کام آنے کی توفیق عطا فرما۔

    اللہ آپ کو اس مضمون کو ڈھونڈ نکالنے اور اس بہترین طریقے سے ترجمہ کرنے، اسے عام کرنے اور توجہ و محنت کرنے کا جزائے خیر دے۔

  8. Rao Muhammad نے کہا:

    محترم سلیم صاحب۔۔
    اسلام علیکم و رحمتہ اللہ۔۔
    آپ کے مضمون پر تبصرے سے پہلے ہی میں آپکا یہ مضمون آپ کے نام کے ساتھ دیگر تین فورمز پر بھیج چکا تھا۔۔ الحمدُللہ مجھے اس پر رپلائی بھی ملے اور بھت سی دعائیں بھی۔۔۔ مجھے ملنے والی دعائوں میں مجھ سے زیادہ آپ کا حصہ ہے۔۔ امید ہے دعاءوں میں حصےداری کا عمل آپ کے مرہون منت انشاءاللہ آئندہ بھی جاری رہے گا۔۔ آپکا بیحد شکریہ۔۔

  9. Darvesh Khurasani نے کہا:

    حاجی صاحب ماشاء اللہ بہت زبردست اور خوبصورت کالم لکھا ہے ۔اور ایک اہم بات کی طرف توجہ دلائی ہے۔

    ہمیشہ کی طرح آپکا یہ کالم بھی قاری میں ایک نیک کام کرنے کا ولولہ پیدا کرتا ہے۔

  10. Yasir Imran نے کہا:

    سلیم بھائی

    ایک خوبصورت تحریر کے لیے شکریہ قبول فرمائیے۔ امید ہے آپ اس بہترین کام کو جاری رکھیں گے۔

    میں نے آپکی یہ تحریر دو چار فورمز پر ڈال دی ہے، آپکے نام کے ساتھ۔

  11. Rao Muhammad نے کہا:

    محترم سلیم صاحب۔۔
    ہمیشہ کی طرح بہت ہی عمدہ تحریر اور ترجمہ۔۔۔ اللہ تعالی آپ کی کاوشوں کو قبول فرمائے۔۔ اور آپکو مزید ہمت عطاء فرمائے۔۔۔ جزاک اللہ خیر۔۔

    • محمد سلیم نے کہا:

      جناب محترم راؤ صاحب، آرٹیکل بھیجنے کے بعد میری خواہش ہوتی ہے کہ کہیں سے خبر مل جائے آرٹیکل قابل قبول تھا یا نہیں، آپ نے فوراً ہی تبصرہ کر کے اس کوفت سے بچا لیا۔ آپکی دعائیں سمیٹ کر فخر محسوس کر رہا ہوں۔ اللہ آپکو خوش رکھے۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s